Saturday, 17 January 2015

مولانا ابوالکلام آزاد اور وفاتِ مسیح


مولانا ابوالکلام آزاد کی شخصیت کسی تعارف کی محتاج نہیں ، اکثر لوگ مولانا  ابوالکلام آزاد کو ایک بڑا عالم جانتے ہیں اور ہمارے مخالف بھی انہیں بہت بڑا بزرگ تسلیم کرتے ہیں لیکن یہ نہیں بتاتے کہ مولانا صاحب حضرت عیسیٰ علیہ السلام کا زندہ ہونا اور واپس آنا نہیں مانتے اور اسے عیسائی عقیدہ تصور کرتے ہیں ۔ اپنے ایک خط میں تحریر فرماتے ہیں ۔

'' یہ عقیدہ اپنی نوعیت میں ہر اعتبار سے ایک مسیحی عقیدہ ہے اور اسلامی شکل و لباس میں ظاہر ہوا ہے ۔  ''
(نقش آزاد ، صفحہ ۱۰۲)


یہی خط مالک رام کی مرتب کردہ کتاب خطوط ابو الکلام آزاد میں بھی ملتا ہے ، جو آپ اس حوالہ میں دیکھ سکتے ہیں ۔


1 comments:

Mohammad Shamail نے لکھا ہے کہ

مجھے افسوس ہے کہاتنی عمدہ کاوش کا علم اتنی دیر بعد ہوا۔ اللہ آپکو بہت جزا دے

اگر ممکن ہے تو اپنا تبصرہ تحریر کریں

اہم اطلاع :- غیر متعلق,غیر اخلاقی اور ذاتیات پر مبنی تبصرہ سے پرہیز کیجئے, مصنف ایسا تبصرہ حذف کرنے کا حق رکھتا ہے نیز مصنف کا مبصر کی رائے سے متفق ہونا ضروری نہیں۔

اگر آپ کے کمپوٹر میں اردو کی بورڈ انسٹال نہیں ہے تو اردو میں تبصرہ کرنے کے لیے ذیل کے اردو ایڈیٹر میں تبصرہ لکھ کر اسے تبصروں کے خانے میں کاپی پیسٹ کرکے شائع کردیں۔